Author's Guide Line

  1. The Research Journal Al-Idah is published bi-annually. We have three sections i.e. English, Arabic and Urdu. The article should be typed and double spaced, printed on one side of the page. Length may vary 8 to 20 pages for articles and 5 or less for book reviews.
  2. All of our issues and articles can be accessed on our website and can be downloaded in PDF format(http://al-idah.szic.pk/). Also the articles can be downloaded from Islamic Research Index Agency (http://iri.aiou.edu.pk/indexing/?page_id=13636).
  3. Article should be written in MS Word. Inpage & PDF files would not be considered.
  4. The copy of the article received by us becomes our possession and whether it is published or not, its return cannot be claimed. The article should be original, neither be already published nor under consideration of publication elsewhere and the contributor, not the Editor, will be legally responsible for responding to any objection in this regard.
  5. Originality and Anti-Plagiarism Certificate should also be filled and sent via email which can be downloaded from our website http://szic.uop.edu.pk/downloads/plag-cert.pdf Moreover; authors will be responsible for academic dishonesty/irregularity, if any.
  6. Articles must follow the format of the Chicago M.L.A style sheet, references should be produced in the form of Endnotes, not Footnotes in the format of M.S Word automatic references style.
  7. The Abstract must be in English as per HEC requirement.
  8. All articles should be uploaded via our Online Journal System.  (OJS) http://al-idah.szic.pk
  9. Editing/Proof reading/Spell check and grammatical correction is the sole responsibility of the author. Please ensure editing of research paper before sending it for publication.
  10. General research norms and policies of Higher Education Commission, Pakistan should be respected.
  11. Research paper should be composed on one side of the A4 sized paper in case of hard-copy submission.
  12. Digital Editing should follow
    1. Use Times New Romans for English, Jameel Noori Nastaleeq font for Urdu and Traditional Arabic Font for Arabic.
    2. Use 12 Font size for English and 15 for Urdu and Arabic
    3. Heading Font Size for English is 14 and 16 for Urdu and Arabic
    4. Use Endnotes in 10 font size in English and 13 for Urdu and Arabic
  13. Paper must include the following:
    1. Research paper must contain an abstract of at least 200 words in English followed by 5 Key Words.
    2. Abstract must follow an Introduction. It should briefly introduce the research along with the methodology and basic objectives of the research.
    3. Discussion should detail the arguments of the research and its general implications.
    4. Conclusion should conclude the discussion.
    5. All references should be given the endnotes according to the policy of Al-Idah.
    6. It should follow Chicago Manuel Style
    7. For Books, start with urfi name of the author, then his complete name, name of book, volume and page no,publisher, place of publication, edition, year of publication. For example, Razi, Muhammad Bin Umar, Asrar ut tanzil wa anwar tawil, Vol. 1, p: 50 Edited Salih bin Abdul Fattah, Dar ul Marifa, Beirut, Lenbon, 1st Edition 1432h,.
    8. If edited or translated book, then the name of editor or translator.
    9. If referred is a Quranic verse, then its font should be Traditional Arabic.
    10. Ahadith are referred as: Bukhari, Muhaaamad Bin Ismail, Al Jamie Sahih lil Bukhari, kitab ul janaiz, bab ziyrat ul qubur, Vol: 1, p. 238, Hadith No. 1283, Darul Kutub il Ilmiayh, Beirut, Lenbon, 9th edition, 1438h,.
  14. Before publication, each research paper undergoes double blind peer review.
  15. After a preliminary reading by the Editorial Board, the articles responding positively to these obligations are sent to referees/ experts on the concerned subjects. The final selection is made only after receiving the assessment of the referees.
  16. The decision of editorial board is final and may not be challenged in any court of law.
  17. The author of research paper stands responsible for his views and its implications repercussions. Al Idah or Sheikh Zayed Islamic Centre University of Peshawar bears no responsibility whatsoever in the views published.
  18. Editorial board reserves the right of modification in the received research. However, the edited research will be published only after the consent of the author.
  19. The author will be given two copies of the journal if published. However, Al Idah is not responsible to return the research paper in either way published or unpublished.
  20. The Editorial Board does not necessarily agree with the views of the contributor, and cannot be held accountable for any statement, comment or information.
  21. The Editorial Board, however, reserves the right of excluding any article without showing cause for it.
  22. The articles for the next issue should reach us (before March 31st for the 1st issue & September 30th for the 2nd issue)

ہدایات برائے مقالہ نگاران
الإیضاح تین زبانوں (اردو، عربی، انگلش) میں چھپنے والا ششماہی تحقیقی مجلہ ہے۔ جو  شیخ زاید اسلامک سینٹر جامعہ پشاور کا حقیقی ترجمان ہے جو 1993 سے مسلسل شائع ہو رہا ہے، ہمارے تمام سابقہ شمارے اور مقالات ہماری ویب سائٹ  (http://al-idah.szic.pk/) سے PDF  فارمیٹ میں ڈاؤن لوڈ کیے جا سکتے ہیں،  نیز  (IRI)  کی ویب سائٹ پر بھی موجود ہیں جس کا لنک یہ ہے (http://iri.aiou.edu.pk/indexing/?page_id=13636) ۔
الإیضاح کو کوئی مقالہ ارسال کرنے کا مطلب یہ ہے کہ مقالہ ، مقالہ نگار نے خود لکھا ہے اور یہ حقیقی، غیر مطبوعہ، اور سرقہ سے خالی ہے۔ نیز کسی بھی قسم کی غیر قانونیت کی ذمہ داری خود مقالہ نگار پر ہو گی، نہ کہ مجلہ پر۔ نیز مقالہ نگار کو الإیضاح کی طرف سے فراہم کردہ مجوزہ حلف نامہ (Undertaking) پر دستخط کرنا ضروری ہوگا۔ جو كہ ویب سائٹ سے  ڈاؤن لوڈ كیا جا سكتا ہے۔
 مجلہ الإیضاح میں شائع ہونے والے مقالات کا اسلوب و منھج وہی ہے جو عالمی طور پر شعبہ علومِ اسلامیہ كے محققین كے ہاں معروف ہے،  باحثین كی آسانی كے لئے اور مقالات كو  مذكورہ منہج كے مطابق مكمل طور سے ڈھالنے كے لئے چند امور كی طرف اشارہ كرنا نہایت ضروری ہے:

  1. مقالہ ایم ایس ورڈ میں لکھا ہوا ہونا چاہیے، ان پیج یا پی ڈی ایف  کی فائل ہر گز قابل قبول نہیں ہوگی،  تمام مقالات  مجلہ "الإیضاح" کی ویب سائٹ http://al-idah.szic.pk  پر رجسٹریشن کرانے کے بعد ارسال کریں،  جب كہ  مقالےکےساتھ علمی سرقہ کا حلف نامہOriginality and Anti-Plagiarism/ Copyright Certificate   بھیجنا ضروری ہے جو كہ الإیضاح كی ویب سائٹ 
      http://szic.uop.edu.pk/downloads/plag-cert.pdfسے ڈاؤن لوڈ کیا جا سکتا ہے۔
  2. مقالہ A+4 سائز کے صفحہ پر ہونا چاہیے،  اردو    فونٹ سائز جمیل نستعلیق نوری میں 15 ، عربی   (Traditional Arabic)میں 16، اور انگلش میں  12 ہونا چاہیے، اوركل  صفحات 8  سے 20 کے درمیان ہوں۔ نیز ادارہ  حسبِ ضرورت  کمی زیادتی کا حق محفوظ رکھتا ہے۔
  3. قرآن مجید کی آیات مبارکہ کسی قرآنی سوفٹ وئیرسے کاپی کی جائیں،تا كہ قرآنی آیات اور دیگر نصوص وا قتباسات میں فرق ملحوظ ركھا جا سكے خصوصاً عربی زبان كے مقالہ جات میں اس بات كا خصوصیت كے ساتھ اہتمام ركھا جائے۔ اسی طرح آیات كو  درج ذیل قوسین كے درمیان میں لكھنا مناسب ہو گا  ﴿    ﴾  ،  مثلاً،  قرآن کریم میں ہے:﴿ يُثَبِّتُ اللَّهُ الَّذِينَ آمَنُوا بِالْقَوْلِ الثَّابِتِ فِي الْحَيَاةِ الدُّنْيَا وَفِي الْآخِرَةِ (1)  اور پھر  (Endnote) ہونا چاہئے۔
  4. حدیث کی تخریج میں مصنف كا نام  یا لقب  پھر کتاب كا نام اور اس كے بعد تصنیف كے اندر عنوانِ کتاب، باب،  جلد اور صفحہ نمبر اور حدیث نمبر بتایا جائے، مناسب رہے گا كہ جس صحابی سے روایت ذكر ہے اس كا نام بھی ذکر کیا جائے خصوصاً جب وہ حدیث کتبِ مسانید میں سے ہو۔ سب سے پہلی بار حدیث  کا حوالہ یوں ہونا چاہیے۔ حضرت انس رضی اللہ فرماتے ہیں: " إِنْ كَانَتِ الأَمَةُ مِنْ إِمَاءِ أَهْلِ المَدِينَةِ لَتَأْخُذُ بِيَدِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَتَنْطَلِقُ بِهِ حَيْثُ شَاءَتْ "([1]). اور پھر  (Endnote)میں یوں : ([1])صحیح بخاری: محمد بن إسماعيل بخاری( ت 256)،  کتاب الأدب، باب الکبر، 8/20حدیث نمبر(6072): دار ابن كثير، دمشق، شام, ط 3 ، 1978م۔   دوبارہ  حوالے میں مصنف اور کتاب کی طباعت کیے متعلق معلومات ذکر نہ کی جائیں، مذکورہ حدیث کا  حوالہ دوسری بار یوں ہوگا : ([1])  صحیح بخاری,  کتاب الأدب، باب الکبر، 8/20حدیث نمبر(6072)۔
  5. کتب فقہ کی توثیق میں کتاب، باب، فصل اوراگراسکے بعد مطلب، فصل یا کوئی اورچھوٹا عنوان ہو تو اسے ذکر کرنے کے بعد جلد اور صفحہ نمبر ذکر کیا جائے، مثلا: ابن عابدين, كتاب البيوع, باب خيار العيب, مطلب في مسألة المُصَرَّاة: 5/160. اسی طرح دیگر تمام کتب میں بھی سب سے پہلے بڑا عنوان پھر اس سے چھوٹا اور آخر میں اس کا ذیلی عنوان مذکور ہو۔ مثلاً سیرت کی کتب سے حوالہ یوں ہونا چاہیے:  سیرت النبی، آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی مکی زندگی، واقعہ طائف: 2/250۔
  6. تمام مصادر و مراجع وحوالہ جات وتعلیقات وغیرہ مقالہ کے آخر میں  (Endnote)کی شکل میں ہونے چاہیں۔
  7. تمام مصاد رو مراجع وحوالہ جات وتعلیقات وغیرہ مقالہ کےنمبرزقوسین یعنی گول بریکٹ  كے بغیر ہونےچاہیں مثلا یوں  1 ،  خواہ وہ نمبرز  عبارات کے وسط میں ہوں یا  (Endnote) میں ۔ اس کے علاوہ یہ نمبرز آٹومیٹک ہوں ہاتھ سے لكھے ہوئے قابل قبول نہ ہونگے۔
  8. اردو اورعربی کےمقالات کےعناوین كا انگلش میں ترجمہ ہونا ضروری ہے، پھرمقالہ نگار کا اردو اور انگلش میں نام اور اسکے ساتھ حاشیہ میں مقالہ نگار کا اردواورانگلش میں علمی منصب پھر انگلش میں  (Abstract)اور کلیدی الفاظ (Keywords) ہونا چاہئیں۔
  9. مناسب رہے گا اگر مقالہ كے اندر موضوعات كو مباحث كے تحث تقسیم كیا جائے  اور تمام مباحث كو ڈارک اوربقیہ عبارات سے نمایاں ذكر كیا جائے ۔
  10. مجلہ "الإیضاح" علوم اسلامیہ کیلئےخاص ہے، کوئی بھی ایسا مقالہ شائع نہیں ہو گا جسکا تعلق متعلقہ موضوعات سے نہ ہو۔
  11. ٹائپنگ اور پروف ریڈنگ کی غلطیوں یا منہج علمی پرپورا نہ اترنے کی صورت میں مقالہ مسترد کر دیا جائے گا، عدم توجہی کی بنا پرشائع ہونے کی صورت میں مقالہ نگار ہرقسم کی غلطیوں کا ذمہدار خود ہوگا۔
  12. الإیضاح میں طبع شدہ مواد کے ساتھ مجلہ کے ایڈیٹرز کا متفق ہونا ضروری نہیں۔ لہذا مضمون کی تمام تر ذمہ داری اس کے مصنف یا مترجم پر عائد ہوتی ہے۔
  13. الإیضاح کے لئے ارسال کردہ مقالات ادارے کی ملکیت ہو جاتے ہیں۔  لہذا شائع ہونے یا نہ ہونے کی صورت میں ان مقالات کی واپسی کا دعوی قابلِ قبول نہ ہو گا۔
  14.  الإیضاح  کو بھیجے گئے مقالات میں ضروری ادارتی ترمیم، تنسیخ وتلخیص کا حق حاصل ہو گا۔
  15.  ادارہ کو الإیضاح کے لئے بھیجے گئے کسی بھی مقالہ کو بغیر وجہ بتائے شائع نہ کرنے کا حق حاصل ہو گا۔
  16. شریک مقالہ نگار کو مجلہ کے متعلقہ شمارہ کی دو کاپیاں فراہم کی جائیں گی۔
  17. الإیضاح کے پہلے شمارے کے لئے مارچ اور دوس رے کے لئے ستمبر سے پہلے پہلے  مقالات  پہنچنے ضرورى ہىں۔
  18. مقالات کى ترسیل الإیضاح كی ویب سائٹ پر آن لائن (آن لائن جرنل سسٹم) كے طریقہ كار كے مطابق كی جائے۔ یعنی مقالہ نگار كو پہلے الایضاح كی ویب سائٹ پر جا كر  (OJS) سسٹم كے مطابق خود كو رجسٹر كروانا ہو گا اور اس كے بعد مقالہ اپلوڈ كیا جائے گا۔